عدنان مسعود کی سخن آرایاں۔ دروغ برگردن قاری

راس آ نہیں سکا کوئی بھی پیمان الوداع از جون ایلیا

راس آ نہیں سکا کوئی بھی پیمان الوداع
تُو میری جانِ جاں سو مری جان الوداع

میں تیرے ساتھ بُجھ نہ سکا حد گزر گئی
اے شمع! میں ہوں تجھ سے پشیمان الوداع

میں جا رہا ہوں اپنے بیابانِ حال میں
دامان الوداع! گریبان الوداع

اِک رودِ نا شناس میں ہے ڈوبنا مجھے
سو اے کنارِ رود ، بیابان الوداع

خود اپنی اک متاعِ زبوں رہ گیا ہوں میں
سو الوداع، اے مرے سامان الوداع

سہنا تو اک سزا تھی مرادِ محال کی
اب ہم نہ مل سکیں گے ، میاں جان الوداع

اے شام گاہِ صحنِ ملالِ ہمیشگی
کیا جانے کیا تھی تری ہر اک آن ، الوداع

کِس کِس کو ہے علاقہ یہاں اپنے غیر سے
انسان ہوں میں ، تُو بھی ہے انسان الوداع

نسبت کسی بھی شہ سے کسی شے کو یاں نہیں
ہے دل کا ذرہ ذرہ پریشان الوداع

رشتہ مرا کوئی بھی الف ، بے سے اب نہیں
امروہا الوداع سو اے *بان* الوداع

اب میں نہیں رہا ہوں کسی بھی گمان کا
اے میرے کفر ، اے مرے ایمان الوداع

جون ایلیا

Share

3 Comments to راس آ نہیں سکا کوئی بھی پیمان الوداع از جون ایلیا

  1. February 15, 2012 at 10:14 pm | Permalink

    واہ کیا بات ہے۔ بہت شکریہ جناب۔

  2. February 16, 2012 at 3:03 am | Permalink

    واہ
    بہت عمدہ
    لا جواب

  3. February 17, 2012 at 7:11 am | Permalink

    جون ايليا مرحوم ايك. زبان كے شاعر 

    الفاظ   كا استادانۃ استعمال انكا كمال تها  اب شايئد ائسےشاعر پيدا هونا مشكل هے

Leave a Reply

You can use these HTML tags and attributes: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>